لہسن کے فوائد

تعارف 

لہسن مقوی بدن ہے یہ اپنی  عمدگی اثرات سے بہت سے جسمانی امراض کو رفع کرتا ہے اور مناسب فوائد پیدا کرتا ہے اس کی بد بو تاثیرات کا ایک جزو اعلی ہے جس میں بعض جراثیم کو فناء کرنے کی قوت موجود ہے

فوائد 

لهن مقوی جسم مقوی باہ اور مصفی خون ہے بدہضمی درد پسلی  با و گولہ قلت ہاضمہ بلغمی کھانسی  (دمہ ) ورم بدن بواسیر بادی کرم شکم دور کرنے کے لیے بہت مفید ہے حافظ کو بڑھاتا ہے دماغ کوقوی کرتا ہے بصارت کو تیز کرتا ہے موتیا بند کا پانی اس کے کھانے سے بند ہو جا تا ہے آنکھ کے پردوں کی اصلاح کرتا ہےقلت بینائی کے لیے مجرب ثابت ہوا ہے

ایام و با میں اس کے استعمال سے زہریلا مادہ جسم میں داخل نہیں ہوتا اور اگر پہلے سے جسم میں مادہ جمع ہوتو لہسن کا استعال اس کو رفتہ رفتہ خارج کر دیتا ہے بلغمی گٹھیا فالج  لقوہ میں بچوں، بوڑھوں اور سرد مزاجوں کے لیے اس کا غذا اور دوا میں استعال کرنا بہت زیادہ نفع بخش اور فائدہ رساں ہے

اب جدید تحقیق سے ثابت ہوا ہے کہ لہسن میں دق کے جراثیم ہلاک کرنے کی طاقت ہے اس سے مریضان دق کو بھوک لگتی ہے یہ خودی جزو بدن بنتا ہے اور خون کو بڑی مدد دیتا ہے

ایک جرمن ڈاکٹڑ کا مقولہ ہے کہ جب تک لہسن  دنیا میں موجود ہے مریض دق کو مایوس نہ ہونا چاہیے یعنی  مریضان دق کے لیے حکمی دوا تسلیم کی گئی ہے لہسن کو پانی میں پیس چھان کر شیشی میں رکھ لیں اور غذا کے درمیان دو تین بار چھر چھ ماشہ مریض دق کو پلائیں تو بھوک بڑھتی اور ہاضمہ درست ہوتا ہے خون کی روانی میں مددملتی  ہے۔

خالص لہسن کا عرق سوزش پیدا کرتا ہے اس لیے پانی میں ملا کر اس کا رقیق ہلکا عرق نکالا جائے جوحلق  اور معدے میں زیادہ جلن  و خراش پیدا نہ کرے لہسن  کا مزاج گرم وخشک ہے اس لیے گرم مزاجوں میں اس کا زیادہ استعمال مضر  ثابت ہوا ہے مریضان دق کے لیے اس کا گاہے گا ہے سونگھنا  قاتل جراثیم دق ہے

بچوں کے گلے میں سینے پر باریک کپڑے میں باندھ کر اس طرح لٹکا  دیں کہ سینے اورحلق سے لہسن مس  ہوتا رہے  تو بلغمی  کھانسی  زائل ہو جاتی ہے اور کف نکلنے لگتا ہے لہسن ایک دو گری سوتے وقت روزانہ کھاتے رہیں یا لہسن کو شہد میں ملا کر یا لہسن  کو ابال کر قوام میں ڈال کر کھاتے رہیں تو تمام فوائد مندرجہ بالا حاصل ہو جاتے ہیں

مفردات کی ایک کتاب ”خزائن الادویہ میں اسے چوتھے درجہ تک گرم بتایا گیا ہے اور اس کی حرارت کو جسم کی حرارت غریزی کے مثل قرار دیا گیا ہے

گرم مزاجوں کے لیے

مزید تفصیل بیان کرتے ہوئے لکھا ہے کہ اس کا زیادہ استعال گرم مزاجوں کے لیے مضر اور سرد و بلغمی مزاجوں کے لیے مفید ہے۔ کشنیز خشک گوشت اور نمک اس کے مصلح  ہیں یہ بواسیر پیچش اور فنازیر  کے مریضوں کے لیے بھی مضر  ہے گرم مزاجوں کو پیاس لگاتا ہے منہ میں خشکی پیدا کرتا ہے اور صداع (دردسر) کا سبب بنتا ہے

لہسن کے فوائد

مذکورہ کتب کے علاوہ طب کی اور کتابوں میں بھی لہسن کے کثیر فائدے بیان کئے گئے ہیں جن میں کچھ مخصوص کا ذکر یہاں کیا جا تا ہے لہسن جملہ  بلغمی  سردوریاحی  امراض میں مفید ہے یہ ریاح کو خارج کر کے نفخ شکم کو دور کرتا ہے گنٹھیا میں بے حد مفید ہے پھیپھڑے
پیٹ اور گردوں کی اکثر بیماریوں کو اچھا کرتا ہے۔

اس کا تیل کان میں ڈالنے سے درد بند ہو جاتا ہے دنیز سیلان أذن کو روکتا ہے اور چونکہ اس میں گندھک کا کافی حصہ ہوتا ہے اس لیے جلدی امراض کو بھی دور کرتا ہے عفونت کو دور کر کے زخموں کو مندمل  کر دیتا ہے خارجی طور پر اس کا استعمال ورم کوبھی تحلیل کرتا ہے پیٹ کے کیڑوں کو مارتا ہے  گرم و متحرک  ہونے کے سبب مدر بول و حیض بھی ہے مادہ تولید کو بڑھا کرتحریک دیتا ہے اور بھوک کو بڑھتا ہے

لہسن کے چند مرکبات

نسخہ: آدھ سیر چھلا ہوا صاف لہسن  ایک سیر گائے کے دودھ میں اتنا جوش دیا جائے کہ وہ خوب گل جائے۔ اب اس میں اکیاون تولہ شہد خالص اور 9 تولہ خالص دیسی گھی شامل کیا جائے جب یہ اجزاء حل ہوجائیں تو نیچے اتار لیا جائے ۔ اس میں مندرجہ ذیل دوائیں سفوف بنا کر شامل کی جائیں معجون تیار ہے لونگ، جائفل جاوتری مرچ سیاہ مصطلگی رومی الائچی خور الائچی کلاں پوست ہلیلہ کابلی دارچینی زنییل یا زنبیل لفظ کی تھوڑی غلط فہمی ان دونوں میں سے اک ٹھیک ہے ہے ہر ایک 2 تولہ 11ماشہ۔ اگر زعفران ہر ایک ایک تولہ ساڑھے پانچ ماشہ

فوائد
فالج لقوہ’ رعشہ بواسیر برص میں مفید ہے معدہ کو تقوت دے کر بھوک کو بڑھاتی ہے جلد کی رنگت کو نکھارتی ہے بلغم کو دفع کرتی ہے حرارت غریزی کو برانگیختہ کرتی اور قوت باہ کو بڑھتا ہے بوڑھوں کو خاص کر مفید ہے مقدار خوراک چار پانچ  ماشہ صبح یا رات

  لہسن  پر جدید تحقیقات

 لہسن  خدا کا ایک عطیہ ہے جس کے استعمال سے دل و دماغ اور جسم تینوں ترقی پذیر ہوتے ہیں اس کے متواتر استعمال سے جسمانی طاقت بے انتہا بڑھ جاتی ہے اور جسم میں خون صالح پیدا ہوتا ہے لہسن دماغی امراض کنراز اور دق وسل کے لیے بھی بے حد مفید ہے اس کو دواؤں میں ایک عظیم دواخیال کرتا ہوں و سائنس کی ترقی کے ساتھ ساتھ لہسن  پرتحقیقات کا سلسلہ دھیرے دھیرے بڑھتا رہا یہاں تک کہ اب اسے ایک بہترین دافع تعفن دو اقرار دے دیا گیا ہے

 پیاز اور لہسن میں، جنھیں قدیم مصری اور دوسرے ملکوں کے عوام بطور دوا استعمال کرتے ہیں ایسےمادے پائے گئے جو مختلف قسم کے جراثیم اور طفیلی کیڑوں کو بہت تھوڑے عرصہ میں ہلاک کر سکتے ہیں لہسن  میں تو اتنی طاقت کے مادے ملتے ہیں جو دق کے جراثیم کو پانچ منٹ کے اندر اندر ہلاک کر سکتے ہیں

لہسن کے فوائد

Leave a Comment

Translate »